قیامت کے دن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے قریب ترین شخص

عَن عَبدِ اللهِ بنِ مَسعُودٍ رَضِيَ اللهُ عَنهُ أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيهِ وَ سَلَّم قَالَ أَولَى النَّاسِ بِي يَومَ القِيَامَةِ أَكْثَرُهُم عَلَيَّ صَلاَةً  (الترمذي، رقم:٤٨٤)

حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: “قیامت کے دن مجھ سے سب سے زیادہ قریب وہ شخص ہوگا جس نے مجھ پر سب سے زیادہ درود بھیجا (دنیوی زندگی میں)۔”

درود شریف کی کثرت کی وجہ سے شاندار خوشبو کا ظہور

حضرت مولانا فیض الحسن سہارنپوری رحمۃ اللہ علیہ کے داماد نے ایک مرتبہ حضرت مولانا اشرف علی تھانوی رحمۃ اللہ علیہ سے بیان کیا کہ مولانا فیض الحسن سہارنپوری رحمۃ اللہ علیہ کا جس مکان میں انتقال ہوا، وہاں ایک مہینہ تک خوشبو عطر کی آتی رہی۔ حضرت مولانا محمد قاسم صاحب رحمۃ اللہ علیہ سے اس کو بیان کیا ۔ فرمایا یہ برکت درود شریف کی ہے۔ حضرت مولانا فیض الحسن سہارنپوری رحمۃ اللہ علیہ کا معمول تھا کہ ہر شبِ جمعہ کو بیدار رہ کر درود شریف کا شغل فرماتے ۔ (فضائلِ درود، ۱۵۳)

يَا رَبِّ صَلِّ وَ سَلِّم  دَائِمًا أَبَدًا عَلَى حَبِيبِكَ خَيرِ الْخَلْقِ كُلِّهِمِ

 Source: http://ihyaauddeen.co.za/?p=4363