رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی شفاعت

عَن رُوَيفِع بْنِ ثَابِت الأنصَارِي رَضِيَ اللهُ عَنهُ أًنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيهِ وَسَلَّمَ قَالَ مَنْ صَلَّى عَلَى مُحَمَّدٍ وَقَالَ اَلَّلهُمَّ أَنْزِلْهُ المقعَدَ المقَرَّبَ عِنْدَكَ يَومَ القِيَامَة وَجَبَتْ لَهُ شَفَاعَتِي (مسند أحمد)

حضرت رویفع بن ثابت انصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: “جس نے مجھ پر (مندرجہ ذیل) درود بھیجا ، میں اس کی قیامت کے دن سفا رش کروں گا :

اَللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَ أَنْزِلْهُ المقْعَدَ المقَرَّبَ عِنْدَكَ يَومَ القِيَامَة

“اے اللہ ! آپ  محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر درود بھیجئے اور ان کو قیامت کے دن ایسے مبارک ٹھکانے پر پہنچایئے جو آپ کے نزدیک مقرب ہو ۔”

حضرت امام شافعی رحمۃ اللہ علیہ کا مخصوص درود:

“روضۃ الاحباب” میں امام شافعی رحمہ اللہ کے مشہور شاگرد، امام اسماعیل بن ابراہیم مزنی رحمہ اللہ کی روایت سے ان کے خواب کا قصہ نقل کیا گیا ہے کہ میں نے استاذِ محترم حضرت امام شافعی رحمہ اللہ کو انتقال کے بعد خواب میں دیکھا ۔ میں نے پوچھا کہ اللہ تعالیٰ نے آپ کے ساتھ کیا معاملہ فرمایا ؟ حضر ت امام شافعی رحمہ اللہ نے جواب دیا : اللہ تعالیٰ نے میری مغفرت فرما دی اور اعزاز و اکرام کے ساتھ جنّت میں داخل فرمایا اور یہ مرتبہ ایک مخصوص درود کی وجہ سے حاصل ہوا ہے ۔ جو میں ہمیشہ پڑھا کرتا تھا  ۔میں نے دریافت کیا، وہ درود کیا ہے ؟ حضرت امام شافعی رحمہ اللہ نے جواب دیا:

اللّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ كُلَّمَا ذَكَرَهُ الذَّاكِرُونَ وَ كُلَّمَا غَفَلَ عَن ذِكْرِهِ الْغَافِلُونَ

اے اللہ ! حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر اتنا درود (رحمت) نازل فرما، جتنا ان کو ذکر کرنے والے ذکر کرتے ہیں اور جتنا غافلین (ذکر نہ کرنے والے) ان کے ذکر سے غافل رہتے ہیں ۔ (فضائلِ درود)

يَا رَبِّ صَلِّ وَ سَلِّم  دَائِمًا أَبَدًا عَلَى حَبِيبِكَ خَيرِ الْخَلْقِ كُلِّهِمِ

 Source: http://ihyaauddeen.co.za/?p=3993